Benazir Bhutto Shaheed Youth Development Program

ایک لڑکی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
,
,
,
,
ایک لڑکی راستے سے گزرے تو سب اسکو اپنی نگاھوں کا نشانہ بنا لیتے ھے یہ بس والا ،۔۔،،،،،،،،،،،،،،،،،،،وہ رکشہ والا،،،،،،،،،،، ،وہ اسکول کا چوکیدار،،،،،،،،،،،، وہ چاٹ والا۔،،،،،،،،وہ رشید پان والا،،،،،،،،،،،،،،،گلیوں کے آورہ لڑکے،،،،،،،،،، ،کس ،کس کا ذکر کروں کس ،کس کا نام لوں ۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر تک مرض سے پہلے لڑکی کی خوبصورتی پر دیہان دیتے ہیں ۔۔۔۔۔ لکین،،،،،،،،،،،
جو لڑکی سے شادی کرنے اتا ہے ۔وہ یہ نہیں دیکھتا کہ وہ لڑکی کتنی خوبصورت ھے اسے جہیز چاہےہوتا ہے ۔ اچھی نوکری درکار ہوتی ہے۔ایسا کیوں؟ کب تک ؟ کب تک ؟؟؟ نظر مرد کی خراب ہوتی ہے ،، لیکن جس شے کو وہ راستوں گلیوں بازاروں اور ھر جگہ تکتا ھی رھتا ھے موقع آنے پر وھی مرد اپنی آنکھوں کو ٹیلی سکوپ بناکر جہیز پر لگا دیتا ھے۔
یہ چھوٹی ،چھوٹی بچیاں جن کی تباہی کی خبریں اۓ دن ٹیلی وژن پر اخبارات میں دیکھتے ہیں پڑھتے ہیں ،،،،یہ جلانا، ،،،،،،،،،یہ تیزب ڈالنے،،،،،،،،،،، کاری قرار دینا،،،،،،،،،، ستی کرنا،،،،،زیادہ لڑکیوں کی پیدائش پر عورت کو طلاق دینا،،،،،،،،،،،، کتنے ظلم ہیں ۔ کس کس کو برداشت کرئں۔ ،،،،،،،،،،،،اگر مرد نشہ کر کے مارے تو جائز۔ ا،،،،،،،،،،،،،گر مرد نہ کماۓ تو اس کی مرضی۔ ،،،،،،،،،عورت چھاڑو پونچھا کر کے بچے پالے ۔ لیکن حکم مرد کا چلے ؟ کیسی زندگی اور ایسی زندگی کس وجہ سے؟ لیکن ان سب کےباوجود اگر مرد کا دل بھر جاے اور وہ کسی نئ عورت کو غلام بنانا چا ہے اور پہلی غلام احتجاج کرے تو اسلام کو بیچ میں لے اتے ہیں ۔۔۔۔ بلکہ عورت کے ھر معاملے پر اسلام کو ھی ببیچ میں داغ دیا جاتا ھے۔۔۔۔۔۔ کیا اسلام صرف مردوں کے لیے۔ نھی ؟ کیا حقوق صرف مرد ھی کے ھوتے ھے ۔۔۔؟ ۔۔۔۔۔۔۔ آج " الرجال قوامون علی النساء" عورتوں پر مردوں کے تسلط کی آیت کو ایک عورت کے حلاف ایک ڈھال بنادیا گیا ھے۔ ان عورتوں کا قصور بتاو ،،،،،،،،،،، انکا قصور کیا ھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
نو ماہ کوکھ میں رکھنے والی ذات کی یہ تذلیل یہ رسوائ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں مانتا ہوں کہ ہر ذی حیات کہ لے کچھ اصول وضوابط ہوتے ہیں لیکن وہ اصول مذہب کے ہوتے ہیں۔ یا پورے معاشرے کےبناے ہوے ہوتے ہیں۔ یہ نہیں کہ ایک انسان کی مرضی سے دوسرےانسان کے لے اصول وضوابط طے کیۓ جائیں۔ یا ان میں تبدیلی کی جاۓ ۔ کبھی کبھی دل چاہتا ہے کہ بغاوت کر دیں ۔
عورت مقدّس ھے، اسکے تقدّس کو اپنے اعمال سے پامال مت کیجئے